A tricky question of an atheist to Imam Jafar Sadiq (A.S)

Atheist: “can your Lord fit the entire universe into an egg without making the egg any bigger and the universe any smaller?”

Imam Jafar as-Sadiq (ع): “I would like you to look at the sky and at that bird in the sky, and at that tree and at all those people who have gathered around us and now look at me.”

Atheist: “I see them all.”

Imam Jafar as-Sadiq (ع): “If Allah can fit all of those things inside the tiny pupil of your eye, do you think he cannot fit the universe into an egg?

Allah is Great | اللہ بہت بڑا ہے

اللہ بہت بڑا ہے!!! اُس کی توحید چھوٹی چھوٹی باتوں سے خطرے میں نہیں پڑ جاتی، وہ اتںا بڑا یے کہ اُس کی گواہی کے لیے “پیغمبر محمد” آئے، اُس کے یقین کے لیے “امام علی” کی زات وجود میں آئی، اُس نے محبت کا ثبوت مانگا تھا “امام حسین” نے کربلا بسائی، اُس نے 3 دن کے پیاسے کو دربا بھیجا اور پھر اس کی خواہش پر “پیاسہ دریا سے بھی پیاسہ آیا”(اللہ اکبر) !!!

لوگ اُسے سمجھنا چاہتے ہیں لیکن جو وہ چاہتا ہے وہ نہیں چاہتے۔ وہ مذہب سے بلند تر ہے، اُس نے انسانوں کے درمیان بگاڑ کی وجہ سے مذہب کی شکل میں جینے کا نظام دیا، اسلام کی شکل میں اس نظام کو تکمیل تک پہچایا، اب لوگ اس میں “راکٹ سائنس” تلاش کرتے ہیں، اُس نے اپنی نعمت کو مسلمانوں تک محدود نہیں رکھا، ہوا، پانی، خوشبو، اور ایسی بہت سے نعمت سب کو عطا کی، وہ چاہتا تو ایسا ہوتا کہ بس مسلمانوں پر ہی بارش ہوگی باقی جگہ نہیں ہوگی لیکن ایسا نہیں ہوا، وہ بلند ہے ان سب سے، اُسے پستی میں تلاش نہیں کرو (تحریر:بندہ قمبر

مسجدوں کا عاشق

———مسجدوں کا عاشق ——-

ایک شخص نے یوں قصہ سنایا کہ میں اور میرے ماموں نے حسب معمول مکہ حرم شریف میں نماز جمعہ ادا کی اورگھر کو واپسی کیلئے روانہ ہوئے۔ شہر سے باہر نکل کر سڑک کے کنارے کچھ فاصلے پر ایک بے آباد سنسان مسجد آتی ہے، مکہ شریف کو آتے جاتے سپر ہائی وے سے بارہا گزرتے ہوئے اس جگہ اور اس مسجد پر ہماری نظر پڑتی رہتی ہے اور ہم ہمیشہ ادھر سے ہی گزر کر جاتے ہیں مگر آج جس چیز نے میری توجہ اپنی طرف کھینچ لی تھی وہ تھی ایک نیلے رنگ کی فورڈ کار جو مسجد کی خستہ حال دیوار کے ساتھ کھڑی تھی، چند لمحے تو میں سوچتا رہا کہ اس کار کا اس سنسان مسجد کے پاس کیا کام! مگر اگلے لمحے میں نے کچھ جاننے کا فیصلہ کرتے ہوئے اپنی کار کو رفتار کم کرتے ہوئے مسجد کی طرف جاتی کچی سائڈ روڈ پر ڈال دیا، میرا ماموں جو عام طور پر واپسی کا سفر غنودگی میں گزارتا ہے اس نے بھی اپنی اپنی آنکھوں کو وا کرتے ہوئے میری طرف حیرت سے دیکھتے ہوئے پوچھتا، کیا بات ہے، ادھر کیوں جا رہے ہو؟

ہم نے اپنی کار کو مسجد سے دور کچھ فاصلے پر روکا اور پیدل مسجد کی طرف چلے، مسجد کے نزدیک جانے پر اندر سے کسی کی پرسوز آواز میں سورۃ الرحمٰن تلاوت کرنے کی آواز آ رہی تھی، پہلے تو یہی اردہ کیا کہ باہر رہ کر ہی اس خوبصورت تلاوت کو سنیں ، مگر پھر یہ سوچ کر کہ اس بوسیدہ مسجد میں جہاں اب پرندے بھی شاید نہ آتے ہوں، اند جا کر دیکھنا تو چاہیئے کہ کیا ہو رہا ہے؟

ہم نے اند جا کر دیکھا ایک نوجوان مسجد میں جاء نماز بچھائے ہاتھ میں چھوٹا سا قرآن شریف لئے بیٹھا تلاوت میں مصروف ہے اور مسجد میں اس کے سوا اور کوئی نہیں ہے۔ بلکہ ہم نے تو احتیاطا ادھر ادھر دیکھ کر اچھی طرح تسلی کر لی کہ واقعی کوئی اور موجود تو نہیں ہے۔

میں نے اُسے السلام و علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ کہا، اس نے نطر اُٹھا کر ہمیں دیکھا، صاف لگ رہا تھا کہ کسی کی غیر متوقع آمد اس کے وہم و گمان میں بھی نہ تھی، حیرت اس کے چہرے سے عیاں تھی۔

اُس نے ہمیں جوابا وعلیکم السلام و علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ کہا۔

میں نے اس سے پوچھا، عصر کی نماز پڑھ لی ہے کیا تم نے، نماز کا وقت ہو گیا ہے اور ہم نماز پڑھنا چاہتے ہیں۔

اُس کے جواب کا انتظار کئے بغیر میں نے اذان دینا شروع کی تو وہ نوجوان قبلہ کی طرف رخ کئے مسکرا رہا تھا، کس بات پر یا کس لئے یہ مسکراہٹ، مجھے پتہ نہیں تھا۔ عجیب معمہ سا تھا۔

پھر اچانک ہی اس نوجوان نے ایک ایسا جملہ بولا کہ مجھے اپنے اعصاب جواب دیتے نظر آئے،

نوجوان کسی کو کہہ رہا تھا؛ مبارک ہو، آج تو باجماعت نماز ہوگی۔

میرے ماموں نے بھی مجھے تعجب بھری نظروں سے دیکھا جسے میں نظر انداز کر تے ہوئے اقامت کہنا شروع کردی۔

جبکہ میرا دماغ اس نوجوان کے اس فقرے پر اٹکا ہوا تھا کہ مبارک ہو، آج تو باجماعت نماز ہوگی۔

دماغ میں بار بار یہی سوال آ رہا تھا کہ یہ نوجوان آخر کس سے باتیں کرتا ہے، مسجد میں ہمارے سوا کوئی بندہ و بشر نہیں ہے، مسجد فارغ اور ویران پڑی ہے۔ کیا یہ پاگل تو نہیں ہے؟

میں نے نماز پڑھا کر نوجوان کو دیکھا جو ابھی تک تسبیح میں مشغول تھا۔

میں نے اس سے پوچھا، بھائی کیا حال ہے تمہارا؟ جسکا جواب اس نے ــ’بخیر و للہ الحمد‘ کہہ کر دیا۔

میں نے اس سے پھر کہا، اللہ تیری مغفرت کرے، تو نے میری نماز سے توجہ کھینچ لی ہے۔ ’وہ کیسے‘ نوجوان نے حیرت سے پوچھا۔

میں نے جواب دیا کہ جب میں اقامت کہہ رہا تھا تو نے ایک بات کہی مبارک ہو، آج تو باجماعت نماز ہوگی۔

نوجوان نے ہنستے ہوئے جواب دیا کہ اس میں ایسی حیرت والی کونسی بات ہے؟

میں نے کہا، ٹھیک ہے کہ اس میں حیرت والی کوئی بات نہیں ہے مگر تم بات کس سے کر رہے تھے آخر؟

نوجوان میری بات سن کر مسکرا تو ضرور دیا مگر جواب دینے کی بجائے اس نے اپنی نظریں جھکا کر زمین میں گاڑ لیں، گویا سوچ رہا ہو کہ میری بات کا جواب دے یا نہ دے۔

میں نے اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے کہا کہ مجھے نہیں لگتا کہ تم پاگل ہو، تمہاری شکل بہت مطمئن اور پر سکون ہے، اور ماشاءاللہ تم نے ہمارے ساتھ نماز بھی ادا کی ہے۔

اس بار اُس نے نظریں اُٹھا کر مجھے دیکھا اور کہا؛ میں مسجد سے بات کر رہا تھا۔

اس کی بات میرے ذہن پر بم کی کی طرح لگی، اب تو میں سنجیدگی سے سوچنے لگا کہ یہ شخص ضرور پاگل ہے۔

میں نے ایک بار پھر اس سے پوچھا، کیا کہا ہے تم نے؟ تم اس مسجد سے گفتگو کر رہے تھے؟ تو پھر کیا اس مسجد نے تمہیں کوئی جواب دیا ہے؟

اُس نے پھرمسکراتے ہوئے ہی جواب دیا کہ مجھے ڈر ہے تم کہیں مجھے پاگل نہ سمجھنا شروع کر دو۔

میں نے کہا، مجھے تو ایسا ہی لگ رہا ہے، یہ فقط پتھر ہیں، اور پتھر نہیں بولا کرتے۔

اُس نے مسکراتے ہوئے کہا کہ آپکی بات ٹھیک ہے یہ صرف پتھر ہیں۔

اگر تم یہ جانتے ہو کہ یہ صرف پتھر ہیں جو نہ سنتے ہیں اور نہ بولتے ہیں تو باتیں کس سے کیں؟

نوجوان نے نظریں پھر زمیں کی طرف کر لیں، جیسے سوچ رہا ہو کہ جواب دے یا نہ دے۔

اور اب کی بار اُس نے نظریں اُٹھائے بغیر ہی کہا کہ ؛

میں مسجدوں سے عشق کرنے والا انسان ہوں، جب بھی کوئی پرانی، ٹوٹی پھوٹی یا ویران مسجد دیکھتا ہوں تو اس کے بارے میں سوچتا ہوں

مجھے اُنایام خیال آجاتا ہے جب لوگ اس مسجد میں نمازیں پڑھا کرتے ہونگے۔

پھر میں اپنے آپ سے ہی سوال کرتا ہوں کہ اب یہ مسجد کتنا شوق رکھتی ہوگی کہ کوئی تو ہو جو اس میں آکر نماز پڑھے، کوئی تو ہو جو اس میں بیٹھ کر اللہ کا ذکر کرے۔ میں مسجد کی اس تنہائی کے درد کو محسوس کرتا ہوں کہ کوئی تو ہو جو ادھر آ کر تسبیح و تحلیل کرے، کوئی تو ہو جو آ کر چند آیات پڑھ کر ہی اس کی دیواروں کو ہلا دے۔

میں تصور کر سکتا ہوں کہ یہ مسجد کس قدر اپنے آپ کو باقی مساجد میں تنہا پاتی ہوگی۔

کس قدر تمنا رکھتی ہوگی کہ کوئی آکر چند رکعتیں اور چند سجدے ہی اداکر جائے اس میں۔

کوئی بھولا بھٹکا مسافر، یا راہ چلتا انسان آ کر ایک اذان ہی بلند کرد ے۔

پھر میں خود ہی ایسی مسجد کو جواب دیا کرتا ہوں کہ اللہ کی قسم، میں ہوں جو تیرا شوق پورا کرونگا۔

اللہ کی قسم میں ہوں جو تیرے آباد دنوں جیسے ماحول کو زندہ کرونگا۔

پھر میں ایسی مسجدمیں داخل ہو کر دو رکعت پڑھتا ہوں اور قرآن شریف کے ایک سیپارہ کی تلاوت کرتا ہوں۔

میرے بھائی، تجھے میری باتیں عجیب لگیں گی، مگر اللہ کی قسم میں مسجدوں سے پیار کرتا ہوں، میں مسجدوں کا عاشق ہوں۔

میری آنکھوں آنسوؤں سے بھر گئیں، اس بار میں نے اپنی نظریں زمیں میں ٹکا دیں کہ کہیں نوجوان مجھے روتا ہوا نہ دیکھ لے،

اُس کی باتیں۔۔۔۔۔ اُس کا احساس۔۔۔۔۔اُسکا عجیب کام۔۔۔۔۔اور اسکا عجیب اسلوب۔۔۔۔۔کیا عجیب شخص ہے جسکا دل مسجدوں میں اٹکا رہتا ہے۔۔۔۔۔

میرے پاس کہنے کیلئے اب کچھ بھی تو نہیں تھا۔

صرف اتنا کہتے ہوئے کہ، اللہ تجھے جزائے خیر دے، میں نے اسے سلام کیا، مجھے اپنی دعاؤں میں یاد رکھنا کہتے ہوئے اُٹھ کھڑا ہوا۔

مگر ایک حیرت ابھی بھی باقی تھی۔

نوجوان نے پیچھے سے مجھے آواز دیتے ہوئے کہا تو میں دروازے سے باہر جاتے جاتے رُک گیا،

نوجوان کی نگاہیں ابھی بھی جُھکی تھیں اور وہ مجھے کہہ رہا تھا کہ جانتے ہو جب میں ایسی ویران مساجد میں نماز پڑھ لیتا ہوں تو کیا دعا مانگا کرتا ہوں؟

میں نے صرف اسے دیکھا تاکہ بات مکمل کرے۔

اس نے اپنی بات کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے کہا میں دعا مانگا کرتا ہوں کہ

’ اے میرے پروردگار، اے میرے رب! اگر تو سمجھتا ہے کہ میں نے تیرے ذکر ، تیرے قرآن کی تلاوت اور تیری بندگی سے اس مسجد کی وحشت و ویرانگی کو دور کیا ہے تو اس کے بدلے میں تو میرے باپ کی قبر کی وحشت و ویرانگی کو دور فرما دے، کیونکہ تو ہی رحم و کرم کرنے والا ہے‘

مجھے اپنے جسم میں ایک سنسناہٹ سی محسوس ہوئی، اپنے آپ پر قابو نہ رکھ سکا اور پھوٹ پھوٹ کر رو دیا۔

پیارے دوست، پیاری بہن

کیا عجیب تھا یہ نوجوان، اور کیسی عجیب محبت تھی اسے والدین سے!

کسطرح کی تربیت پائی تھی اس نے؟

اور ہم کس طرح کی تربیت دے رہے ہیں اپنی اولاد کو؟

ہم کتنے نا فرض شناس ہیں اپنے والدین کے چاہے وہ زندہ ہوں یا فوت شدہ؟

بس اللہ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں نیک اعمال کی توفیق دے اور ہمارا نیکی پر خاتمہ کرے، اللھم آمین

ازراہ کرم! اگر آپ کو اس ایمیل کا موضوع اچھا لگا ہے تو اپنے ان احباب کو بھیج دیجیئے جن کا آپ چاہتے ہیں بھلا اور فائدہ ہو جائے۔

مت بھولئے کہ نیکی کی ترغیب دلانے والے کو نیکی کرنے والے جتنا ثواب ملتا ہے۔

کیا کبھی آپ میں سے کسی نے یہ سوچا ہے کہ موت کے بعد کیا ہوگا؟ جی ہاں موت کے بعد کیا ہوگا؟

تنگ و تاریک گڑھا، گھٹا ٹوپ اندھیرا، وحشت و ویرانگی، سوال و جواب، سزا و جزا، اور پھر جنت یا دوزخ۔

Understand a Man, You might know him but not that deeply

I think everyone might have read about Mom’s Wife’s and Girls, Its time to learn something about Men. No doubt, Men are also the creation of Allah but there are only few who understand him. Most of the people take him as a idle with no emotions. But it ain’t true.
Now let’s see what a man do to live his life and give comfort to others life. He starts compromising at early age. He sacrifice his food for her sister’s chocolate. Later he give up his love for just a smile on his parents face. He sacrifices his love for his wife and children by working late nights. A man also have a heart and he wants to be with you all. But what he do, you can’t imagine his feelings. He builds their future by taking loans from banks and repay them for his whole life. He sacrifices his wishes upon his children and wife. He used to bought many things before marriage but after marriage, he tries to give comfort and tries to give his family everything. Believe me, he struggles a lot but still has to face the family’s mood off. Yet every mother, wife and boss tries to have control over him. Finally his life ends up by compromising for other happiness. He is that creature of Allah who no one can compete with.
It is heartily request to you that kindly respect men and boys. It might have possible that you don’t know what he has sacrificed for you. Don’t consider him a creation of Allah without emotions. Just extend your hands when he needs it. Though he won’t ask you to do so but everything without expectations feels good.

ABC Of Life

HOW TO ACHIEVE YOUR GOAL BY UNDERSTANDING ABC OF LIFE.

Avoid negative sources, people, things and habits

Believe in Allah SWT & your efforts

Consider things from every angle

Devotion to the Cause of Rasool Allah SAWS, is the essence of life

Enjoy life purposefully today & get ready for tomorrow

Family and Friends are hidden treasures, seek them and enjoy their riches

Give more than you planned to give

Hang on to your dreams

Ignore those who try to discourage you

Just do it

Keep on trying, no matter how hard it seems, it will get better

Life is short; maximize your resource utilization for the benefit of society

Make it happen

Never lie, cheat or steal, always strCike a fair deal

Open your eyes and see things as they really are

Practice makes perfect

Quitters never win and winners never quit

Recite, study and learn Quran as soon as possible, avoid excuse(s)

Stop procrastinating

Take control of your destiny in the life hereinafter

Understand yourself in order to better understand others

Visualize The Judgment Day scenes often

Want it more than anything

Xccelerate your efforts

You are unique of all of Allah’s creations, nothing can replace you

Zero in your target and go for it

SPECIAL THANKS TO AZMAT KHAN WHO SEND ME THIS EMAIL. :-)

 

HAVE YOU READ THE FOUR NOBLE TRUTHS OF BUDDHA? IF NOT THEN CLICK HERE. THAT ARE AWESOME. I LIKE THEM VERY MUCH.

Enhanced by Zemanta

My Day: Friday, March 11, 2011

Hello Guys!

I’m gonna share my day with you today. Though it’s saturday, march 12 but it’s ok …. I know you’re so cool than me. :-) So here is what i want to share with you.

Yesterday (Friday, March 11, 2011) morning, there was a lecture of Cost Accounting that i really hate. I’m currently repeating this course for the third time. :-( Every time i take this course, i use to drop it because of sucking performance. But now it’s my last semester and i had to pick this. :-(

But one thing i like about Cost Accounting period is that my female teacher is so young and she call us like “Yaar (true friend)” and that’s the thing which attracts me to carry this course on… hahahaha.. The class is of 3 hours and i don’t get bored. After that I saw an email on my mobile with the happy news from my friend which was the B grade in our most difficult course “Entrepreneurship”. I was so happy that i wasn’t expecting this B grade even. Thanks to almighty Allah. After discussing those matters of my friends, me and my friend decided to go back to our home. Then my three more friends hop in to the university and one of them ask me to stay here for the girl. Wowww…. Isn’t it amazing? He was asking me like “Yar koi larki phasani hai… (There should be my girlfriend)” hahahaha… Well he tried but failed… We discuss the reason and he said that stars are not agree with my plans. While driving, i always scold my friend with his really bad attitude and habits of immature mentality. Though i’m full of faults but at least i can say that i’m better than him. :-) May be better than you.. hahaha…

After coming back to home, i decided with my family to go for the dinner and we went then to the Sichuan Chinese Restaurant at M.M.Alam Road. My father used to get to this hotel as he loved Chinese. We sat on the same table where my father used to sit and it reminds me the past events and memories. I felt something missing in my life. But on the whole, i enjoyed the dinner and this is the time i’m finished writing this blog :)

I’ll get back to you with something interesting soon…

Till then……… See you. and Good Bye… ohhhhhhhh wait wait wait… Goodnight.

Enhanced by Zemanta